عالم کی ابتدا بھی ہے تو انتہاء بھی تو


عالم کی ابتدا بھی ہے تو انتہاء بھی تو
#1
New thread 

عالم کی ابتدا بھی ہے تو انتہاء بھی تو ‘‘
ہر سو تعینات میں جلوہ نما بھی تو

شام شب الست کا بدرالدجی بھی تو
اور صبح کائنات کا شمس الضحی بھی تو

نقطہ بھی تو ہے قوس بھی تو زاویہ بھی تو
مرکز بھی تو محیط بھی تو دائرہ بھی تو

تو نور بھی بشر بھی ہے فخر بشر بھی ہے
پہچان ہے بشر کی خدا کا پتا بھی تو

صدیاں تری کنیز تو لمحے ترے غلام
نور ازل بھی تو ہے ابد کی گھٹا بھی تو

اے کہ طبیب علت ارواح عاصیاں
میری پناہ تو ہے مرا آسرا بھی تو

پہنچا کہاں کہاں ترے جلووں کا رنگ و نور
مہمان عرش و گوشہ نشین حرا بھی تو

ہے مجمع الصفات تیری ذات یا نبیؐ
شاہد بھی تو بشیر بھی تو مصطفی بھی تو

تجھ سے بہار گلشن ہستی کا رنگ و آب
خلد بریں کی بلبل شیریں نوا بھی تو

آیا تجھی سے فہم و فراست میں انقلاب
معمار قصر حکمت و فکر رسا بھی تو
Reply

Possibly Related Threads...
Thread / Author Replies Views Last Post
Last Post by UMER
24-11-2017, 06:45 PM
Last Post by UMER
24-11-2017, 06:31 PM
Last Post by UMER
24-11-2017, 06:29 PM



Users browsing this thread: 1 Guest(s)